<body topmargin="0" leftmargin="0" bgcolor="#F9F8EC" bgproperties="fixed"><script type="text/javascript"> function setAttributeOnload(object, attribute, val) { if(window.addEventListener) { window.addEventListener('load', function(){ object[attribute] = val; }, false); } else { window.attachEvent('onload', function(){ object[attribute] = val; }); } } </script> <div id="navbar-iframe-container"></div> <script type="text/javascript" src="https://apis.google.com/js/plusone.js"></script> <script type="text/javascript"> gapi.load("gapi.iframes:gapi.iframes.style.bubble", function() { if (gapi.iframes && gapi.iframes.getContext) { gapi.iframes.getContext().openChild({ url: 'https://www.blogger.com/navbar.g?targetBlogID\x3d12814790\x26blogName\x3d%D8%A7%D8%B1%D8%AF%D9%88+%D8%A8%DB%8C%D8%A7%D8%B6\x26publishMode\x3dPUBLISH_MODE_BLOGSPOT\x26navbarType\x3dBLUE\x26layoutType\x3dCLASSIC\x26searchRoot\x3dhttps://bayaaz.blogspot.com/search\x26blogLocale\x3den_US\x26v\x3d2\x26homepageUrl\x3dhttp://bayaaz.blogspot.com/\x26vt\x3d2065659182679175016', where: document.getElementById("navbar-iframe-container"), id: "navbar-iframe" }); } }); </script>

Tuesday, September 19, 2006

چاند چہرہ ستارہ آنکھیں

مرے خدایا! میں زندگی کے عذاب لکھوں کہ خواب لکھوں یہ میرا چہرہ، یہ میری آنکھیں بجھے ہوئے چراغ جیسے جو پھر سے جلنے کے منتظِر ہوں وہ چاند چہرہ ستارہ آنکھیں وہ مہرباں سایہ دار زلفیں جنھوں نے پیماں کئیے تھے مجھ سے رفاقتوں کے، محبتوں کے کہا تھا مجھ سے کہ اے مسافر رہِ وفا کے جہاں بھی جائیگا ہم بھی آئیں گے ساتھ تیرے بنیں گے راتوں میں چاند ہم تو دن میں سائے بکھیر دیں گے وہ چاند چہرہ ستارہ آنکھیں وہ مہرباں سایہ دار زلفیں وہ اپنے پیماں رفاقتوں کے محبتوں کے شکست کرکے نہ جانے اب کس کی رہ گزر کا منارہءِ روشنی ہوئے ہیں مگر مسافر کو کیا خبر ہے وہ چاند چہرا تو بجھ گیا ہے ستارہ آنکھیں تو سو گئی ہیں وہ زلفیں بے سایہ ہوگئی ہیں وہ سوشنی اور وہ سائے مری عطا تھے سو مری راہوں میں آج بھی ہیں کہ میں مسافر رہِ وفا ہوں وہ چاند چہرہ ستارہ آنکھیں وہ مہرباں سایہ دار زلفیں ہزاروں چہروں ہزاروں آنکھوں ہزاروں الفوں کا اک سیلابِ تند لے کر مرے تعاقب میں آرہے ہیں ہر ایک چہرہ ہے چاند چہرہ ہیں ساری آنکھیں ستارہ آنکھیں تمام ہیں مہرباں سایہ دار زلفیں میں کس کو چاہوں ، کس کو چوموں میں کس کے سائے میں بیٹھ جاؤں بچُوں کہ طوفاں میں ڈوب جاؤں کہ میرا چہرہ، نہ مری آنکھیں مرے خدایا! میں زندگی کے عذاب لکھوں کہ خواب لکھوں ۔۔۔ عبید اللہ علیم ۔۔۔ ١٩٦٦ء ۔۔۔



0: تبصرہ جات

Post a Comment

<< صفحہ اول

بیاض کیا ہے؟

بیاض اردو شاعری اور ادب کا نچوڑ ہے

اراکینِ بیاض

اسماء

عمیمہ

حارث

میرا پاکستان

طلحہ

باذوق

حلیمہ

بیا

میاں رضوان علی

بیاض میں شمولیت؟

اگر آپ بیاض میں شامل ہونا چاہتے ہیں تو یہ قوائد پڑھ لیں، بعد از اپنے نام اس ای میل پر بھیجیں۔

دیکھنے میں دشواری؟

اردو کو بغیر دشواری کے دیکھنے کے لیے یہاں سے فونٹ حاصل کریں۔

گذشتہ تحریرات:

Powered by Blogger

بلاگ ڈیزائن: حنا امان

© تمام حقوق بحق ناشران محفوظ ہیں 2005-2006